Syed Ejaz Shaheen فارسی لفظ ۔۔۔آفرینش۔۔ پر تحقیق۔۔۔از: سید اعجازشاہین

Syed Ejaz Shaheen, Dubai, United Arab Emirates E-mail:syedaijazshaheen@gmail.com

 

آفْرِینِش [آف + ری + نِش] (فارسی)

آفْرِیدَن    آفْرِین    آفْرِینِش
فارسی مصدر آفریدن’ سے حاصل مصدر ہے۔ اردو میں بطور اسم مستعمل ہے۔ اردو میں سب سے پہلے 1582ء میں “کلمۃ الحقائق” میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم  نکرہ (  مؤنث  )
  1. پیدائش، تخلیق، پیدا ہونا، عدم سے وجود میں آنا۔
“زمین و آسمان کی آفرینش میں بھی حق ہی کارفرما ہے۔”     ( 1967ء، اردو دائرہ معارف اسلامیہ، 155:3 )
2. دنیا، کائنات، جو کچھ خدا نے خلق کیا۔
“ہماری زمین آفرینش سے ایک چھوٹا حصہ ہے۔”     ( 1833ء، مفتاح الافلاک، 53 )
انگریزی ترجمہ
Creation

مترادفات  
کائِنات        جَنَم        اِیْجاد        مَخْلُوقات        تَخْلِیق

Viewers: 1210
Share