Ramzi Asam | Aik Shair Aik Safha | رمزی آثم کی شاعری سے ایک صفحہ

Ramzi Asam, Karachi (Pakistan) Email: ramzi_aasim2005@yahoo.com Cell# 0300 2885150  غزلیں در و دیوار جاں چلے گئے ہیں بارشوں میں مکاں چلے گئے ہیں کچھ دنوں سے ملے نہیں خود سے […]

Ramzi Asam, Karachi (Pakistan) Email: ramzi_aasim2005@yahoo.com Cell# 0300 2885150 

غزلیں

در و دیوار جاں چلے گئے ہیں
بارشوں میں مکاں چلے گئے ہیں

کچھ دنوں سے ملے نہیں خود سے
ہم اچانک کہاں چلے گئے ہیں

دشت میں ہ گئے اکیلے ہم
اور سب کارواں چلے گئے ہیں

کوئی آیا نہ دیکھنے کے لیے
ہم یونہی رائگاں چلے گئے ہیں

چند لاشیں ملی ہیں بچوں کی
اور کچھ نوجواں چلے گئے ہیں

ایک وحشت ہمارے ساتھ رہی
ہم یہاں سے وہاں چلے گئے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جنگلوں میں پکار دی گئی ہے
عمر ایسے گزار دی گئی ہے

اس شجر کے قریب مت جانا
اس میں حیرت اتار دی گئی ہے

یہ مری زندگی نہیں میری
یہ مجھے مستعار دی گئی ہے

ایک رستے پہ چل رہا ہوں میں
بس یہی رہ گزار دی گئی ہے

آنسوؤں کی قطار کے پیچھے
کیا کوئی آبشار دی گئی ہے

ہجر کا رنج کھنچتا ہوا دن
یا شب انتظار دی گئی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنسوؤں کو بلائیے تو سہی
اور کچھ دن رلائیے تو سہی

آپ کے ہاتھ کی لکیروں میں
ہم کہیں ہیں دکھائیے تو سہی

کیا ملا دشت کی سیاحت سے
کچھ ملا بھی بتائیے تو سہی

زندگی بھی عجیب راحت ہے
خوش دلی سے بتائیے تو سہی

رنج تصویر میں نظر آئے
ایسا منظر بنائیے تو سہی

دھوپ خود راستہ بدل لے گی
پیڑ غم کا لگائیے تو سہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابر سے ہاتھ چھڑایا نہ گیا
دھوپ نکلی بھی تو سایہ نہ گیا

میں محبت کے لئیے کافی ہوں
یہ مگر اُس کو بتایا نہ گیا

خوب رویا میں لپٹ کر خود سے
رنج ایسا تھا چھپایا نہ گیا

رات وہ آگ لگی جنگل میں
ایک بھی پیڑ بچایا نہ گیا

میں اکیلا ہی گیا غم کی طرف
کوئی اِس دشت میں آیا نہ گیا

تیری تصویر مکمل نہ ہوئی
کون سا نقش بنایا نہ گیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیری آواز سے بنی ہوئی ہے
زندگی ساز سے بنی ہوئی ہے

غم سناتا ہوں بس اسی کو میں
میری غم ساز سے بنی ہوئی ہے
ْ
آخرش بھید یہ کھلا مجھ پر
تو کسی راز سے بنی ہوئی ہے

اک تحیر سے آشنائی مری
میرے آغاز سے بنی ہوئی ہے

وہ ستارہ ہے ہم سفر میرا
اسی دم ساز سے بنی ہوئی ہے

یہ عمارت پرانی ہوتے ہوئے
نئے انداز سے بنی ہوئی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے احباب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں
میں فقط خواب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں

روک سکتا ہی نہیں آنکھ میں آئے آنسو
گھر میں تالاب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں

ابر ہوں میرے مقدر میں نہیں ہے پانی
دشت میں آب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں

چاندنی روز لپٹ جاتی ہے آ کر مجھ سے
ورنہ مہتاب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں

مجھ سے اب خواب کی حیرت نہیں بدلی جاتی
ایسے اسباب کا ہونا ہی بدل سکتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہزار رنج اٹھائے ہوئے سے لگتے ہیں
کہ یہ چراغ بجھائے ہوئے سے لگتے ہیں

سوال پوچھ رہے ہیں کہ زندگی کیا ہے
جواب ڈھونڈ کے لائے ہوئے سے لگتے ہیں

پناہ مانگ رہے ہیں ہماری آنکھوں میں
ہمیں یہ خواب ستائے ہوئے سے لگتے ہیں

یہ چاندنی یہ ستارے یہ کہکشاں یہ چراغ
ہمارے ہاتھ میں آئے ہوئے سے لگتے ہین

کسی کی چھت ہی نہیں تو کسی کا دروازہ
یہ گھر ہوا کے بنائے ہوئے سے لگتے ہں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھکن سمیٹ چکے ہیں غبار باندھ لیا
تمام رخت سفر ایک بار باندھ لیا

درخت دیکھ رہے ہیں مسافروں کی طرف
یہ کس نے دھوٌپ کے آگے حصار باندھ لیا

طویل ہوتی ہوئی زندگی مجھے بھی دیکھ
مرے بدن نے یہ کیا اختصار باندھ لیا

ابھی میں تم سے جدا بھی نہیں ہوں پوری طرح
ابھی سے تم نے مرا انتظار باندھ لیا

کوئی چراغ جلے گا نہ روشنی ہو گی
ہوا نے عہد اگر میرے یار باندھ لیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا چلے تو اذیت شمار کرتے ہیں
چراغ صبح تلک انتظار کرتے ہیں

ہماری راہ میں دریا کہیں نہیں آتا
ہم آنسوؤں پہ فقط انحصار کرتے ہیں

وہ بند اپنے مکانوں کی کھڑکیاں کر لیں
ہوا کے جھونکے جھنیں سوگوار کرتے ہیں

درخت جانتے ہیں بولتے نہیں کچھ بھی
وہ کون ہیں جو پرندے شکار کرتے ہیں

رہا نہ بس میں کسی کے بھی زندگی کرنا
چلو یہ راہ بھی ہم اختیار کرتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنکھ حیران نہ ہو خواب کو مشکل نہ پڑے
اس طرح ٹوٹ کے اعصاب کو مشکل نہ پڑے

کھلا رکھتا ہوں گریبان ہمشہ اپنا
زخم دیتے ہوئے احباب کو مشکل نہ پڑے

اپنا سامان اٹھا لایا ہوں میں آتے ہوئے
گھر سے جاتے ہوئے سیلاب کو مشکل نہ پڑے

لوٹ جاتے ہیں سر شام پرندے یوں بھی
چاند جب اترے تو تالاب کو مشکل نہ پڑے

اس طرف آگ دہکتی ہے ادھر جاتے ہوئے
کہیں اس خطہ شاداب کو مشکل نہ پڑے

Viewers: 10343
Share