Tanwir Phool | Ghazal | تیری قسمت میں لکھی دنیا کی بستی کب تلک

تنویر پھول البانے۔ نیویارک ۔ امریکہ tanwirp@gmail.com غزل حق پرستی چھوڑ کر یہ زر پرستی کب تلک تیری قسمت میں لکھی دنیا کی بستی کب تلک ظلم کی ناگن رہے […]

تنویر پھول
البانے۔ نیویارک ۔ امریکہ
tanwirp@gmail.com

غزل

حق پرستی چھوڑ کر یہ زر پرستی کب تلک
تیری قسمت میں لکھی دنیا کی بستی کب تلک
ظلم کی ناگن رہے گی اس کو ڈستی کب تلک
زندگی انسان کی یاں اتنی سستی کب تلک
اے پجاری زر کے! اے قارون کے وارث بتا
بندہء مفلس پہ تیری چیرہ دستی کب تلک
اے فلک! تیری بلندی ، سرفرازی تابکے؟
اے سمندر! تیری گہرائی و پستی کب تلک
شب گزرتی جا رہی ہے ، تنگ ہے وقتِ نشاط
محفلِ عیش و طرب میں ہو گی مستی کب تلک
چھوڑ ساری شوخیاں وہ بندہء بے دام ہیں
اُن کی آنکھوں سے نشیلی مے برستی کب تلک
کچھ کتابوں میں،دلوں میں ہوں گے یہ اشعار پھولؔ !
اے سخنور! اس جہاں میں تیری ہستی کب تلک

Viewers: 13621
Share