معروف شاعرہ شبنم شکیل انتقال کر گئیں۔

پروفیسر عابد علی عابد کی صاحب زادی معروف شاعرہ شبنم شکیل کی رحلت کی خبر ابھی پڑھی جیسے شاک سا لگ گیا ہو۔۔ارے،ارے!!؟؟؟دو تین دن پہلے پاکستانی اردو شاعرات کے ضمن میں احتشام انور،شاہد حمید اور ہم گفتگو کررہے تھے ایک نکتہ تو ان کے مقام و معیار سے متعلق تھا دوسری بات جو ذہنی ہم آہنگی کے ساتھ دوران گفت گو کہی گئی وہ مردانہ و زنانہ درجہ بندی کی تھی کہ جون ایلیا نے برسر مشاعرہ ہمیں ٹوکا یہ خواتین و حضراتکیا کہتے ہو۔ حضرت ابو بکرصدیق اور حضرت عائشہ صدیقہ رض یا حضرت علی اور حضرت فاطمہ رض کہتے ہو پھر یہاں کیوں تفریق!؟ شبنم شکیل صاحبہ بلا
شبہ اداجعفری،عرفانہ ریاض کے بعد اہم شخصیت و شاعر رہی ہیں پروین شاکر،شاہدہ حسن،فاطمہ حسن کے ساتھ ان کا نام اور کلام تواتر سے جرائد و مشاعروں کی وساطت سے پڑھنے،سننے کے مواقع ملے:
کس منہ سےگلہ ایسی نگاہوں سے کہ جن میں
پہچا ن کی مو ہو م علا مت بھی نہیں ہے۔۔۔۔۔
شا عر ہو ں مگر ا یسے قبیلے میں ہو ں شبنم
شا عر کی جسے کو ئی ضرورت بھی نہیں ہے
خا لی ر ہتا ہے دل کا ا ک گو شہ
گھر سے با ہر ر ہو ں کہ میں گھر پر
میری ہی گود میں سر رکھ کے بہت پیار کے ساتھ
سب جو ا ں سال تمنّا ئو ں نے د م تو ڑ د یا
پروردگار عالم۔۔۔۔ہماری محترم شاعرہ کی مکمل مغفرت اور لواحقین کو صبر جمیلہ عطا فرمائیں آمین رب العالمین غمگسار و رنجیدہ

سیدانورجاویدہاشمی کراچی
۲ مارچ ۲۰۱۳ عیسوی کی سہ پہر پاکستان؍

Viewers: 893
Share