سخنور فاؤندیشن ایوارڈ 2013ء

معروف شاعرہ ایم زیڈم کنول کے شعری مجموعہ ’’کائنات مٹھی میں‘‘ کوبہترین شاعری کی کتاب قراد دیتے ہوئے سخنور فاؤندیشن ایوارڈ 2013سے نوازا گیا
فیصل آباد میں منعقد ہونے والی تقریب میں انہیں ایوارڈ پیش کیا گیا
دوسرا ایوارڈفصیحہ آصف خان کو انکے شعری مجموعہ ’’محبت سانس لیتی ہے‘‘جبکہ تیسرے انعام کی حقدارعائشہ خالدکو انکے مجموعہ کلام ’’لذتِ شعلہ‘‘پر دیا گیا اور خصوصی انعام زیب النسازیبی کو انکی کتاب ’’سخن تمام‘‘ پردیا گیا

ڈائریکٹر میڈیا شریف اکیڈمی فیصل آباد ؍ نمایندہ اپنا ایٹرنیشنل کے مطابق 11اکتوبر2013کو فیصل آباد میں سخنور فاؤنڈیشن پاکستان اور فیصل آباد آرٹس کونسل کے باہمی اشتراک سے نصرت فتح علی خان ہال میں تقیسم ایوارڈ کی عظیم الشان تقریب منعقدہوئی۔جس میں فیصل آباد کے علاوہ ملک بھر سے اہلِ قلم نے شرکت کی ۔تقریب کی صدارت ڈاکٹر ریاض مجید نے کی ۔ایم زیڈ کنول کی کتاب کائنات مٹھی میں اور انکے فن پر مقررین نے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور انہیں منفرد اسلوب کی شاعرہ قرار دیتے ہوئے خراج تحسین پیش کیا۔ایم زیڈ کنول کا شمار عہدِ حاضر کی صفِ اوّل کے شعراء میں ہوتا ہے ۔انہوں فروغِ ادب اورحصولِ علم کے لئے زندگی وقف کر رکھی ہے ۔انکا شعری مجموعہ ’’کائنات مٹی میں ‘‘شریف اکیڈمی جرمنی کے زیرِ اہتمام ،باقر پبلی کیشنرز سے شائع ہو کر پاکستان اور بیرون از پاکستا ن ادبی و علمی حلقوں میں پذیرائی حاصل کر چکا ہے ۔انکی شاعری میں نئی تراکیب ،نئے استعارات اور نئے خیال انہیں عہدِحاضر کے شعراء میں منفرد مقام عطا کرتے ہیں ۔ انکی شاعری میدان سخن میں ایک نئے عہد کی تعمیر کا پیش خیمہ ہے اور وہ دن دور نہیں جب ایم زیڈ کنول کو عہد ساز شاعر قرار دیا جائے گا۔

Viewers: 935
Share