ایک شام شبیر نازش کے نام

شبیر نازش کے ہاں اکثر اشعار میں قبولِ عام ہونے کی صلاحیت موجود ہے۔احسن سلیم
شبیر نازش کی شاعری میں کمال کا یکساں برتاؤ نظر آتا ہے۔وصی حیدر
مجھے شبیر نازش کی شاعری میں امکانات نظر آتے ہیں،سعید پرویز
shabbir-nazish-kay-nam-01
رپورٹ:عباس ممتاز
نوجوان شاعر شبیر نازش کے اعزاز میں سخنور فورم کراچی اور آرٹس کونسل آف پاکستان کراچی کی لائبریری کمیٹی نے ایک خوب صورت شام کا انعقاد کیا۔تقریب کی صدارت محترم احسن سلیم(مدیرسہ ماہی اجرا)نے کی، مہمانِ خصوصی ملک کے نامور مصور محترم وصی حیدر جبکہ مہمانِ اعزاز محترم سعید پرویز(کالم نگار) تھے۔یہ تیسری پندرہ روزہ نشست دو حصوں پر مشتمل تھی جس کی نظامت کے فرائض عباس ممتاز نے بخوبی ادا کئے۔تقریب کے پہلے حصہ میں صاحبِ شام شبیر نازش سے اُن کے تفصیلی تعارف کے ساتھ کلام سنا گیا جسے حاضرینِ محفل کی جانب سے بے حد سراہا گیا جبکہ دوسرے حصہ میں محفلِ مشاعرہ ہوئی۔
shabbir-nazish-kay-nam-02مہمانِ اعزاز سعید پرویز نے شبیرنازش کی شاعری پر گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ مجھے شبیر نازش کی شاعری میں امکانات نظر آتے ہیں۔مہمانِ خصوصی وصی حیدر نے کہاکہ کینوس کی تقسیم میں تین چیزیں اہم ہوتی ہیں،رنگوں اور تصویر کا اتار چڑھاؤ،تصویر کا متحرک ہونا، پینٹنگ کا پرسکون ہونا،یہ تینوں عناصر پینٹنگز کے لیے لازم و ملزوم ہیں۔میں شبیر نازش کی شاعری کو اس پیمانے پر پرکھتا ہوں تو مجھے کمال کا یکساں برتاؤ نظر آتا ہے جیسے یہ شعر ہے’’کچھ یوں ملا تپاک سے، بس عشق ہو گیا، وہ اجنبی تھا، کون تھا، سوچا نہ پھر کبھی‘‘۔ شبیر نازش کی شاعری اس پیمانے کو اپنے اندر سموئے ہوئے ہے۔ صدرِ محفل احسن سلیم نے شبیرنازش کی شاعری پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ شبیرنازش کراچی کی توانا آواز ہیں ۔ان کے ہاں اکثر اشعار میں قبولِ عام ہونے کی صلاحیت موجود ہے۔
تقریب میں معروف شاعر صابر ظفر، سہیل احمد(چیئرمین لائبریری کمیٹی)،ولی رضوی،غلام علی وفا، عظیم حیدر سید،سحر تاب رومانی ،شکیل جعفری،توقیر تقی، عزیز مرزا،کامی شاہ، افتخار حیدر، م م مغل، نعیم سمیر،افضل ہزاروی،سلیم ناز،ظہیر عباس، سلمان ثروت ، عارف شیخ، ماہ نور خانزادہ، سحر حسن، حمیرا ثروت صدیقی،دلاور عباس، عارف نذیر، روحان دانش،علی بابا، زبیرراج،کامران ہمایوں،فرحان احمد سمیت پچاس سے زائد شعراء اور مختلف شعبوں سے متعلق افراد نے شرکت کی۔
shabbir-nazish-kay-nam-sham
Viewers: 3064
Share