اپنی نوع کے منفرد شاعر دانیال طریر کوئٹہ میں انتقال کر گئے۔

danial tareer queeta

اطلاع: پرویز ساحر۔ ایبٹ آباد

خاموشی کی قِرأت کرسکنے والا شاعر ِ خوش فکر دانیال طریرؔ برسا برس سرطان جیسے موذی مرض سے نبرد آزمائی کرتے کرتے آج واصل بَہ حقّ ہو گیا
اِنّا للہ واِنّا الیہ راجعون

خاموشی کی قِرأت کرنے والے لوگ
ابُّو جی اُور سارے مرنے والے لوگ

روشنیوں کے دھبّے’ اُن کے بیچ خلا
اَور خلاؤں سے ہم ڈرنے والے لوگ

مٹّی کے کوزے اور اُن میں سانس کی لَو
رب رکّھے’ یہ برتن بھرنے والے لوگ

میرے چاروں جانِب اونچی اونچی گھاس
میرے چاروں جانب چَرنے والے لوگ

آخر جسم بھی دیواروں کو سونپ گئے
دروازوں میں آنکھیں دھرنے والے لوگ

( دانیال طریرؔ )

 

Viewers: 2288
Share