Kahi milay to usay ye kehna | افضل صفی کی نظم “کہیں ملے تو اسے یہ کہنا”

۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ملے تو اسے یہ کہنا ۔۔۔۔۔ Kahei milay to use ye kehna کہیں ملے تو اسے یہ کہنا کہ تنہا ساون بِتا چکا ہوں میں سارے ارماں جلا […]
۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ملے تو اسے یہ کہنا ۔۔۔۔۔
Kahei milay to use ye kehna
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
کہ تنہا ساون بِتا چکا ہوں
میں سارے ارماں جلا چکا ہوں
جو شعلے بھڑکے تھے خواہشوں کے
وہ آنسوئوں سے بجھا چکا ہوں
kahi milay to usay ye kehna
k tanha sawan bita chuka hon
me sarary armaN jala chuka hoN
jo sholay bhaRkay thay khahishoN k
wo aansooN se bujha chuka hoN
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
بغیر اس کے اداس ہوں میں
بدلتی رت کا قیاس ہوں میں
بجھا دے اپنی محبتوں سے
سلگتی صدیوں کی پیاس ہوں میں
kahi milay to usay ye kehna
baghair us k udas hoN maiN
badalti rut ka qias hoN maiN
bujha day apni mohabbatoN se
sulagti sadioN ki pias hoN maiN
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
وہ جذبے میرے کچل گیا ہے
جفا کے سانچے میں ڈھل گیا ہے
نہ بدلے موسم بھی اتنا جلدی
وہ جتنا جلدی بدل گیا ہے
KahiN milay to usay ye kehna
wo jazbay meray kuchal gia hay
jafa ky sanchay meiN dhall gia hay
na badlay mosam bhi itna jaldi
wo jitna jaldi badal gia hay
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
میں چاک دامن کو سی رہا ہوں
بہت ہی مشکل سے جی رہا ہوں
دیا جو نفرت کا زہر اس نے
سمجھ کے امرت وہ پی رہا ہوں
kahiN milay to usay ye kehna
maiN chak daman ko see raha hoN
boht hi mushkil say jee raha hoN
dia jo nafrat ka zehr us ny
samajh k amrat wo pee raha hoN
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
فصیلِ نفرت گرا رہا ہوں
گئے دنوں کو بلا رہا ہوں
وہ اپنے وعدوں سے پھر گیا ہے
میں اپنے وعدے نبھا رہا ہوں
kaheiN milay to usay ye kehna
faseel e nafrat gira raha hoN
gaey dinoN ko bula raha hoN
wo apnay waday se mukar gia hay
maiN apnay waday nibha raha hoN
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
یہ کیسی الجھن میں مر رہا ہوں
میں اپنے سائے سے ڈر رہا ہوں
جو ہو سکے تو سمیٹ لے وہ
میں تنکا تنکا بکھر رہا ہوں
KaheiN milay to usay ye kehna
ye kaisi uljhan meiN mar raha hoN
maiN apnay saey se dar raha hoN
jo ho sakay to samait lay wo
maiN tinka tinka bikhar raha hoN
کہیں ملے تو اسے یہ کہنا
نہ دل میں کوئی ملال رکھے
ہمیشہ اپنا خیال رکھے
وہ سارے غم اپنے مجھ کو دے دے
تمام خوشیاں سنبھال رکھے
kaheeN milay to usey ye kehna
na dil meiN koi malal rakhay
hamaisha apna khial rakhay
wo saray gham apnay mujh ko day day
tumam khushiaN sanbhal rakhay
Poet: Muhammad Afzal Safi, Fatehpur (Layyah)
Book: Sehra Udas hay, Page 66-67-68, published in 2003
انتخاب: شاعر؛ افضل صفی، مجموعہءِ کلام “صحرا اداس ہے” صفحہ 66-67-68 مطبوعہ 2003ء
Viewers: 3051
Share