رُخ سے پردہ ہٹا پرے کچھ تو ۔۔۔۔۔۔ تنظیم اختر

تنظیم اختر غزل رخ سے پردہ ہٹا پرے کچھ تو میرے دل کو سکوں ملے کچھ تو اک مدت ہوئی انہیں دیکھے دمِ آخر جھلک دکھے کچھ تو بعد مدت […]

تنظیم اختر

غزل
رخ سے پردہ ہٹا پرے کچھ تو
میرے دل کو سکوں ملے کچھ تو
اک مدت ہوئی انہیں دیکھے
دمِ آخر جھلک دکھے کچھ تو
بعد مدت کے مسکرائے وہ
دور آخر ہوئے گلے کچھ تو
دیکھ تصویر اس ستمگر کی
زخم دل کے ہوۓ ہرے کچھ تو
آسماں ہم بھی دیکھیں خوشیوں کا
غم کے بادل ہٹیں پرے کچھ تو
عمر ساری غموں میں گزری ہے
پھول خوشیوں کے اب کھلے کچھ تو
اتنی نزدیکی بھی نہیں اچھی
فاصلہ درمیاں رہے کچھ تو

Viewers: 284
Share